خانہ کعبہ٬ چند حقائق جو آپ نہیں جانتے

 

اس دنیا میں کوئی ایسی جگہ نہیں جو خانہ کعبہ کی طرح مقدس اور مرکزی حیثیت رکھتی ہو۔ یہ مقام سعودی عرب میں وادیِ حجاز میں واقع ہے- روزانہ ہزاروں افراد چوبیس گھنٹے خانہ کعبہ کا طواف کرتے ہیں ۔ خانہ کعبہ کی مقدس تصاویر لاکھوں گھروں کی زینت ہیں اور کروڑوں مسلمان اس مقام کو اپنا قبلہ تسلیم کرتے ہوئے اس کی جانب رخ کر کے پانچ وقت کی نماز ادا کرتے ہیں۔ خانہ کعبہ مکعب (Cube ) کی شکل میں تعمیر ہونے کے ساتھ ساتھ تاریخ کے آئینہ میں ایک انتہائی خاص مقام کا حامل بھی ہے۔ یہاں ہم خانہ کعبہ کے متعلق چند ایسے حقائق پیش کریں گے جن سے بہت کم لوگ واقف ہیں۔
 


خانہ کعبہ کئی مرتبہ تعمیر ہو چکا ہے:
خانہ کعبہ جس طرح آج ہمیں نظر آتا ہے یہ ویسا نہیں ہے جو حضرت ابراہیم علیہ السلام اور حضرت اسماعیل علیہ السلام کے دور میں تعمیر ہوا تھا۔ وقت کے ساتھ پیش آنے والی قدرتی آفات اور حادثات کی وجہ سے اس کو دوبارہ تعمیر کرنے کی ضرورت پڑتی رہی ہے۔ بیشک ہم سب جانتے ہیں کہ خانہ کعبہ کی دوبارہ تعمیر کا ایک بڑا حصہ نبی کریم صلی اﷲ علیہ وسلم کی زندگی میں نبوت ملنے سے قبل ممکن ہو چکا تھا، یہ وہ وقت تھا جب نبی کریم صلی اﷲ علیہ وسلم نے ایک بڑی خون ریزی کو اپنی دور اندیشی سے روکا تھا۔ ایک بڑے کپڑے میں ہجرِ اسود کو رکھ کر ہر قبیلے کے سردار سے اُٹھوایا تھا۔ اس کے بعد آنے والے وقت میں کئی مرتبہ خانہ کعبہ کی تعمیر ہوتی رہی ہے۔ آخر میں خانہ کعبہ کی تفصیل سے آرائش 1996 میں ہوئی تھی، جس کے نتیجے میں بہت سارے پتھروں کو ہٹا دیا گیا تھا اور بنیاد کو مضبوط کر کے نئی چھت ڈالی گئی تھی۔ یہ اب تک کی آخری بڑی تعمیر ہے اور اب خانہ کعبہ کی عمارت کو پہلے سے کہیں زیادہ مضبوط تصور کیا جاتا ہے۔

اس کے دو دروازے اور ایک کھڑکی ہوا کرتی تھی:
دوبارہ تعمیر کئے جانے سے قبل خانہ کعبہ کا ایک دروازہ اندر داخل ہونے کے لئے اور ایک باہر جانے کے لئے استعمال ہوتا تھا۔ ایک زمانہ تک خانہ کعبہ میں ایک کھڑکی ہوا کرتے تھی۔ خانہ کعبہ کی جو شکل آج موجود ہے اُس میں صرف دورازہ ہے کھڑکی نہیں۔
 


خانہ کعبہ کے مختلف رنگ:
ہم لوگوں نے خانہ کعبہ کو ہمیشہ کالے رنگ کی کسواہ اور سونے کے دھاگوں میں دیکھنے کی ایسی عادت ہو چکی ہے کہ ہم اس کو کسی اور رنگ میں تصور بھی نہیں کر سکتے، یہ روایت عباسد (جن کے گھر کا رنگ کالا تھا) کے دور سے چلی آ رہی ہے اور لیکن اس سے قبل خانہ کعبہ مختلف رنگ کے غلاف سے ڈھکا رہتا تھا ان رنگوں میں ہرا ، لال اور سفید رنگ شامل ہیں۔

خانہ کی چابیاں ایک خاندان کی تحویل میں ہیں:
فتح مکہ کے وقت، نبی کریم صلی اﷲ علیہ وسلم کو خانہ کعبہ کی چابیاں دیں گئی تھیں لیکن بجائے اس کے کہ آپ صلی اﷲ علیہ وسلم یہ چابیاں اپنے پاس رکھتے، آپ صلی اﷲ علیہ وسلم نے یہ چابیاں بنی شائبہ خاندان کے عثمان بن طلحہٰ کو واپس کر دیں۔ اُس وقت سے آج تک وہ ان چابیوں کے روایتی رکھوال ہیں اور نبی کریم صلی اﷲ علیہ وسلم کے نادر الفاظ کی روشنی میں یہ چابیاں ہمیشہ اُن کے پاس ہی محفوظ رہیں گی۔ ’’ اے بنی طلحہٰ، یہ چابیاں روزِ قیامت تک تیری تحویل میں رہیں گی، سوائے اس کے کہ زور زبردستی تجھ سے غیر اخلاقی طریقے سے چھین لی جائیں۔‘‘

پہلے خانہ کعبہ عوام کے لئے کُھلا رہتا تھا:
پہلے خانہ کعبہ ہفتہ میں دو مرتبہ عوام کے لئے کُھلا ہوتا تھا اور کوئی بھی خانہ کعبہ کے اندر داخل ہو کر عبادت کر سکتا تھا لیکن موجودہ زمانے میں زائرین کی تعداد زیادہ ہونے اور دوسری وجوہات کی بنأ پر خانہ کعبہ کو اب سال میں صرف دو مرتبہ کھولا جاتا ہے اور اس میں صرف اعلیٰ شخصیات اور خاص مہمان ہی صرف داخل ہوسکتے ہیں۔
 


خانہ کعبہ کے آس پاس تیراکی کی جا سکتی تھی:
خانہ کعبہ کے وادی کے نچلے حصہ میں ہونے کی وجہ سے دیگر مسائل میں سے ایک مسئلہ یہ تھا کہ جب بارش ہوا کرتی تھی تو وادی میں سیلاب آ جاتا تھا- یہ مکہ جیسے شہر کے لئے کوئی انوکھی بات نہیں تھی لیکن یہ بات دوسرے مسائل کی وجہ بنتی تھی- اس وقت یہاں سیلاب کی روک تھام اور نکاسی آب کا نظام موجود نہیں تھا۔ بارش کے آخری دنوں میں خانہ کعبہ پانی میں آدھا ڈوبا رہتا تھا۔ کیا اس وجہ سے طوافِ کعبہ رُکا؟ ہرگز نہیں۔ مسلمانوں نے کعبہ کے ارد گرد تیراکی شروع کر دی تھی۔

تزئین و آرائش کروانے والے حکمرانوں کے نام کی تختی:
کئی سال تک بہت لوگ اندازہ لگاتے رہے کہ خانہ کعبہ اندر سے کیسا نظر آتا ہے؟ دوسری اور تیسری معلومات کے ذریعے کے مطابق وہ لوگ خوش نصیب ہیں جن کو خانہ کعبہ کے اندر داخل ہونے کی سعادت ملی اور ایک خوش نصیب وہ ہے جس کو تصویر بنانے کا موقع ملا اور لاکھوں لوگوں نے یہ تصویر انٹرنیٹ پر آن لائن دیکھی۔ خانہ کعبہ کا اندر کا حصہ سنگِ مرمر اور ہرے رنگ کے کپڑے سے ڈھکا ہوا ہے۔ جس دور کے حکمران نے خانہ کعبہ کی دوبارہ آرائش کروائی اس نے خانہ کعبہ کے اندر اپنے نام کی تختی بھی لگوائی-

خانہ کعبہ کی تعداد دو ہے:
خانہ کعبہ کے بالکل اوپر جنت میں خانہ کعبہ موجود ہے اس کا ذکر قرآن پاک میں بھی آیا ہے اور نبی پاک صلی اﷲ علیہ وسلم نے بھی اس بات کی نشان دہی کی ہے ۔ اﷲ کے نبی صلی اﷲ علیہ وسلم نے اسراہ والی معراج کا واقعہ سناتے ہوئے فرمایا: ــــ’’جب مجھے بیت المعامور (اﷲ کا گھر) دکھایا گیا تو میں نے حضرت جبرائیل علیہ السلام سے پوچھا انہوں نے جواب دیا کہ یہ بیت المعامور ہے جہان ستر ہزار فرشتے روزانہ اﷲ کی عبادت کرتے ہیں اور جب وہ یہاں سے جاتے ہیں تو واپس نہیں آتے (ہمیشہ نیا دستہ آتا ہے)۔
 


حجرِ اسود:
کیا آپ نے کبھی اس بات پر غور کیا ہے حجرِ اسود چاندی کے سانچے میں کیوں گھرا رہتا ہے؟ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ حجرِ اسود امایاد کی فوج کے ہاتھوں مارے گئے پتھر لگنے کی وجہ سے وقت ٹوٹ گیا تھا جب وہ مکہ پر قابض تھے جبکہ یہ پتھر عبد اﷲ بن زبیر کی ملکیت میں تھا۔ کچھ ذرائع کے مطابق حجرِ اسود بحرین سے تعلق رکھنے والے اسماعیلی گروپ ــ’’Qaqmatians ‘‘ کے ہاتھوں ٹوٹ گیا تھا۔ ان لوگوں کا یہ خیال تھا کہ حج ِ مبارک ایک توہین پرستی کا عمل ہے اپنی بات کو سچ ثابت کرنے کے لئے ان لوگوں نے دس ہزار حجاج کو مار کر ان کی باقیات کو آبِ زم زم کے کنواں میں پھینک دیا تھا۔ یہ غیر انسانی عمل کافی نہیں ہے، یہ شیطان حجرِ اسود کو عرب کے مشرق میں لے گئے اور پھر عراق کے شہر کفا لے گئے جہاں اس کے ایوز تاوان وصول کیا جب ان کو مجبور کیا گیا تھا وہ اس کو خلیفہ عباسد کو واپس کر دیں ، جب اسے واپس کیا گیا تو یہ ٹکڑوں میں تھا اور اس کو یکجان کرنے کا صرف ایک طریقہ سمجھ آیا تھا کہ اس کو چاندی کے سانچے میں رکھا جائے، کچھ تاریخ دانوں کے مطابق اس مقدس پتھر کے کچھ حصے آج بھی کہیں گم ہیں۔

خانہ کعبہ مکعب کی شکل کا نہیں:
مکعب کی شکل سے مشہور خانہ کعبہ دراصل مستطیل کی شکل کا ہے۔خانہ کعبہ کبھی بھی مکعب کی شکل کا نہیں تھا اس کی اصل زاوئے کے مطابق ایک یہ ایک آدھا گول حصہ ہے جس کو حجر اسماوعیل کہا جاتا ہے۔ نبی کریم صلی اﷲ علیہ وسلم کو نبوت ملنے سے پہلے جب خانہ کعبہ کی دوبارہ تعمیر ہوئی تھی تب قریش نے اس بات کی حامی بھری تھی کہ وہ حلال کمائی سے ہی اس کی تعمیر مکمل کریں گے، اس کا مطلب یہ ہے کہ جوئے، لوٹ مار، جسم فروشی اور سود جیسے حرام کاموں سے کمایا ہوا پیسہ استعمال نہیں ہوگا قریش اتنے امیر تجارتی شہر میں ہونے کے باوجود اتنی رقم جمع کرنے میں ناکام ہو چکے تھے جو خانہ کعبہ کی تعمیر اُس کے اصل سائز اور رقبہ کے حساب سے کر سکیں۔ انہوں نے خانہ کعبہ کی چھوٹی عمارت تعمیر کی اور اس کی دیواریں مٹی کی اینٹوں سے بنائی (جس کو حجرِ اسماعیل کہا جاتا ہے حالانکہ کے اس کا حضرت اسماعیل ؑ سے کوئی تعلق نہیں) جو کہ خانہ کعبہ کے حقیقی قطر کی جانب اشارہ کرتی تھیں۔ اپنی زندگی کے آخری حصہ میں حضرت محمد صلی اﷲ علیہ وسلم نے خانہ کعبہ کی دوبارہ تعمیر کا ارادہ کیا تھا مگر یہ عظیم فریضہ انجام دینے سے پہلے ہی آپ صلی اﷲ علیہ وسلم جہاںِ فانی سے کوچ کر گئے۔ خلیفہ عبد اﷲ بن زبیر کے دورِ حکومت کے چند سال کے مختصر وقفہ میں خانہ کعبہ اپنی اُسی شکل میں موجود تھا جس میں نبی صلی اﷲ علیہ وسلم نے دیکھا تھا۔
 
 

(The information extracted from: Akhtar (2012). Ten Things You Didn’t Know About The Kaaba. muslimmatters.org)

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
31 Aug, 2017 Total Views: 29939 Print Article Print
NEXT 
Reviews & Comments
Please correct "nabuwat milne se qabal" nai nabuwat ka ailan krne se qabal.
By: Farhan, Karachi on Aug, 31 2017
Reply Reply
0 Like
shahid khan sb. Boht achi baat ha ke ap london mn hn or apka dil makkah madina mn hota ha. Lakin kiya hi behtar ho ta ke ap aik kafir mulk ke bajae aik musalman mulk mn rahte hote.Musalman jaisa bhi ho, kafron se badar jaha behtar hota ha.
By: mohsin, Rawalpindi on Dec, 07 2014
Reply Reply
0 Like
Musalman kahe b rehay us ka dil Muslims k sath e darakta hy yeah bat app ki har tarha sy galat hy k wo aik hindu mulk main hain...... agar app k pass masjid na hu..... jae namaz na hu...... koi asa kapra na hu k app namaz ada ker sakain, aur namaz b qaza hu re hu tu kia karain gy?? mein tu kahe b namaz par lo ga aur humain tu itni tk ijazat hy k app ko kaabay ki simat na pata hu tu app kahe b murr k namaz ada ker sakty hain...... yaad rakhu mere bahi yeah zameen Allah ki hy na k bagwan ki na kisi namrood ki na kisi firooon ki... Allah ki zameen py hindu raaj ker sakty hain magar tab tk jab tk Allah ny Chaha
By: Atif Mumtaz Abbasi, Hyderabad on Dec, 09 2014
3 Like
Al-hamdolilah boht achhi maloomat sa aagahi mili
By: syed Munir Ahmed, Karachi Sindh on Dec, 07 2014
Reply Reply
1 Like
پڑھنے کے بعد بہت ساری معلومات ملیں اور علم میں اضافہ ہوا
By: Shahbaz, Multan on Dec, 03 2014
Reply Reply
4 Like
SUBHANA ALLAH MA SHAA ALLAH....ALLAH HU AKBAR
By: SAAD RAFIQ, dubai on Nov, 23 2014
Reply Reply
1 Like
Subhan Allah MashaAllah Jazak Allah parh or dakh kr dili khushi Allah Tala Hum Sub ko Apny gar ki ziarat krway ameen
By: Farzana Kosar, Kasur on Nov, 22 2014
Reply Reply
0 Like
Fruitful information of all Muslim
By: Shakeel, Karachi on Nov, 22 2014
Reply Reply
0 Like
Kabba Ki Fazilat Apni Jaga hai Magar Kabba Ki Ezzat RASOOLULLAH (ALEHIS SALAM) Ke Sababa Hai. ULMA-e- KARAAM Ke Nazdeek Zameen Ka Wo Hissa Jahan AAQA (ALEHIS SALAM) Ka Jism-e-Mubarak hai wo har jaga se Afzal Tareen Hai. (From Mahmood Attari)
By: Mahmood Attari, Karachi on Nov, 22 2014
Reply Reply
1 Like
subhan Allah
By: muhammad akram, kamalia pakistan on Nov, 21 2014
Reply Reply
0 Like
mera jism London magar soch Makkah or Madinah may hotee hay ye Allah ka muj per bohat bara karam hay
By: shahid khan, london on Nov, 21 2014
Reply Reply
3 Like
MASH ALLAH..!
By: Umair Rehman, Karachi on Nov, 21 2014
Reply Reply
3 Like
JAZAKALLAH BILKHER.. YA Allah hamesha hamari ankh ko thnada rakhna,, Bait ullah ka nazara krwakr...Ameen.
By: zai,, karachi. on Nov, 21 2014
Reply Reply
0 Like
Ya Allah muslims ko sachi rehnamai ata farma aor un se muasharti behisi khatam kar de.............shandar haqaiq hain about khana kaba.
By: azeem, lahore on Nov, 21 2014
Reply Reply
2 Like
Masha Allah nice Info
By: ZEESHAN KHAN, Karachi on Nov, 20 2014
Reply Reply
1 Like
Very important information thnx Allah ap ko jaza ata farmay
By: Ahtesham khan Jadoon, Abbottabad on Nov, 20 2014
Reply Reply
2 Like
Kindly correct the information second Kaba known as Bait ul Mamoor is not in Jannah but at 7th sky below Arsh. Allah and His Prophet SAW knows.
By: Abrar Akram, Riyadh on Nov, 20 2014
Reply Reply
1 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ
There is no place on Earth as venerated, as central or as holy to as many people as Mecca. By any objective standard, this valley in the Hijaz region of Arabia is the most celebrated place on Earth.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB