فضائل تہجد……قرآن و حدیث کی رُوشنی میں

(Mufti Muhammad Waqas Rafi, Rawalpindi)

اﷲ تعالیٰ نے انسان کو اِس دُنیا میں صرف اور صرف اپنی عبادت، اپنی معرفت اور اپنی پہچان کروانے کے لئے بھیجا ہے، تاکہ وہ اﷲ تعالیٰ کی عبادت اور اُس کی بندگی کرکے اُس کی ذات کو پہچان کر اور اُس کی معرفت حاصل کرکے اِس دُنیا میں اﷲ تعالیٰ کو راضی کرلے ، اور پھر آخرت کی ہمیشہ ہمیشہ کی زندگی عیش و عشرت اور راحت آرام میں بسر کرے ۔یہی وجہ ہے کہ حضرات انبیاء ؑ، صحابہ کرامؓ، تابعینؒ، تبع تابعینؒ اور ائمہ مجتہدینؒ نے اپنے تمام شعبہ ہائے زندگی ٗمعاشرت و معیشت، غمی و خوشی، تنگ دستی و فراوانی اور اپنی حرکات و سکنات اور نشست و برخاست کے ہروقت اور ہر لمحہ میں اِس عظیم مقصد کو اپنے سامنے رکھا اور اس کے اختیار کرنے میں ہمیشہ وہ کوشان رہے، وہ دُنیوی کاروبار ٗزراعت و تجارت، صنعت و حرفت وغیرہ بھی کرتے تھے، لیکن اُن کے دِل ہمیشہ اﷲ تعالیٰ کی محبت و الفت میں مست و سرشار رہتے اور کسی وقت بھی اُس کی یاد سے غافل نہیں رہتے تھے۔ ایسے ہی لوگوں کے بارے میں اﷲ تعالیٰ نے قرآنِ مجید میں فرمایا ہے: ’’ترجمہ: ( یہ وہ لوگ ہیں کہ) جنہیں کوئی تجارت یا کوئی خرید و فروخت نہ اﷲ کی یاد سے غافل کرتی ہے، نہ نماز قائم کرنے اور نہ زکوٰۃ دینے سے۔‘‘ ( النور: ۲۴؍۳۷) (ترجمہ مفتی تقی عثمانی)

یہی وہ لوگ ہیں جو رات جیسے پر سکون وقت میں بھی راحت و آرام کے بجائے اپنے محبوب حقیقی کے سامنے عبادت و بندگی کے لئے دست بستہ کھڑے ہوتے ہیں ،اور نماز میں اُس کے سامنے راز و نیاز میں مشغول ہوجاتے ہیں۔

اﷲ تعالیٰ نے اِنہی لوگوں کا قرآن مجید میں مختلف انداز میں ذکر فرمایاہے۔ چنانچہ ایک جگہ ارشاد ہے:’’ترجمہ: اُن کے پہلو (رات کے وقت) اپنے بستروں سے جدا رہتے ہیں، وہ اپنے رب کو ڈر اور اُمید (کے ملے جلے جذبات) کے ساتھ پکار رہے ہوتے ہیں، اور ہم نے اُن کو جو رزق دیا ہے وہ اُس میں سے (نیکی کے کاموں میں ) خرچ کرتے ہیں ، چنانچہ کسی متنفس کو کچھ پتہ نہیں کہ ایسے لوگوں کے لئے آنکھوں کی ٹھنڈک کا کیا سامان اُن کے اعمال کے بدلے میں میں چھپا کر رکھا گیا ہے۔‘‘ (السجدۃ: ۳۲؍۱۶، ۱۷)

ایک دوسری جگہ ارشاد ہے:’’ترجمہ: وہ رات کے وقت کم سوتے تھے، اور سحری کے اوقات میں وہ استغفار کرتے تھے۔‘‘(الذاریات:۵۱؍۱۷، ۱۸)

ایک اور جگہ ارشاد ہے: ’’ترجمہ:اور (رحمان کے بندے وہ ہیں) جو راتیں اِس طرح گزارتے ہیں کہ اپنے پروردگار کے آگے (کبھی) سجدے میں ہوتے ہیں اور (کبھی) قیام میں۔‘‘ (الفرقان: ۲۵؍۶۴)

ایک جگہ ارشاد ہے: ’’ترجمہ: بھلا (کیا ایسا شخص اُس کے برابر ہوسکتا ہے ) جو رات کی گھڑیوں میں عبادت کرتا ہے، کبھی سجدے میں، کبھی قیام میں آخرت سے ڈرتا ہے اور اپنے پروردگار سے رحمت کا اُمید وار ہے؟ کہوکہ: کیا وہ جو جانتے ہیں اور جو نہیں جانتے ، سب برابر ہیں؟۔‘‘(الزمر: ۳۹؍۹)

ایک دوسری جگہ ارشاد ہے: ’’ترجمہ:اور رات کے اوقات میں بھی تسبیح کرو اور دِن کے کناروں میں بھی تاکہ تم خوش ہوجاؤ۔‘‘(طہ: ۲۰؍۱۳۰)

ایک اور جگہ ارشاد ہے: ’’ترجمہ:بے شک رات کے وقت اُٹھنا ہی ایسا عمل ہے جو جس سے نفس اچھی طرح کچلا جاتا ہے اور بات بھی بہتر طریقے پر کہی جاتی ہے۔‘‘ (المزمل: ۷۳؍۶)

ایک جگہ اﷲ تعالیٰ اپنے پیغمبر ا سے فرماتے ہیں: ’’ترجمہ: اے پیغمبرا! تمہارا پروردگار جانتا ہے کہ تم دوتہائی رات کے قریب اور کبھی آدھی رات اور کبھی ایک تہائی رات (تہجد کی نماز کے لئے) کھڑے ہوتے ہو اور تمہارے ساتھیوں میں سے بھی ایک جماعت( ایسا ہی کرتی ہے)۔‘‘ ((المزمل: ۷۳؍۲۰)

ایک دوسری جگہ فرماتے ہیں:’’ترجمہ: اور رات کے کچھ حصے میں تہجد پڑھا کرو جو تہمارے لئے ایک اضافی عبادت ہے، اُمید ہے کہ تمہارا پروردگار تمہیں ’’مقام محمود‘‘ تک پہنچائے گا۔‘‘(بنی اسرائیل: ۱۷؍۷۹)

اسی طرح احادیث مبارکہ میں بھی تہجد کی نماز پڑھنے کے بے شمار فضائل اور مختلف قسم کی ترغیبات وارد ہوئی ہیں۔ چنانچہ حضرت عبد اﷲ بن سلام ص فرماتے ہیں کہ جب حضور اقدس ا مدینہ منورہ تشریف لائے تو لوگ آپ ا کی طرف دوڑنے لگے اور کہنے لگے کہ حضور ا تشریف لائے ہیں ، میں بھی لوگوں کے ساتھ آیا تاکہ دیکھوں (کہ واقعی آپ ا نبی ہیں یا نہیں)میں نے آپ اکا چہرہ مبارک دیکھ کر کہا کہ یہ چہرہ جھوٹے شخص کا نہیں ہوسکتا، وہاں پہنچ کر جو سب سے پہلا ارشاد حضور ا کی زبان سے سناوہ یہ تھا کہ لوگو! آپس میں سلام کا رواج ڈالو اور (غرباء کو) کھانا کھلاؤ اور صلہ رحمی کرو اور رات کے وقت جب سب لوگ سوتے ہوں (تہجد کی) نماز پڑھا کرو، تو سلامتی کے ساتھ جنت میں داخل ہوجاؤگے۔‘‘(قیام اللیل)

حضرت علی ص سے مروی ہے کہ حضور اقدس ا نے ارشاد فرمایا کہ جنت میں ایسے بالا خانے ہیں (جوآبگینوں کے بنے ہوئے معلوم ہوتے ہیں ) اُن کے اندر کی سب چیزیں باہر سے نظر آتی ہیں۔ صحابہ ث نے عرض کیا یارسول اﷲ ا! یہ کن لوگوں کے لئے ہیں؟ حضورا نے فرمایا جو اچھی طرح سے بات کریں، اور (غرباء کو) کو کھانا کھلائیں اور ہمیشہ روزے رکھیں اور ایسے وقت میں رات کو تہجد پڑھیں جب کہ لوگ سو رہے ہوں۔‘‘(ترمذی، ابن ابی شیبہ)

حضرت بلال حبشی صسے روایت ہے کہ رسول اﷲا نے ارشاد فرمایا کہ : ’’تم رات کے جاگنے کو لازم پکڑو کیوں کہ یہ تم سے پہلے صالحین اور نیک لوگوں کا طریقہ ہے اور رات کا قیام اﷲ تعالیٰ کی طرف تقرب کا ذریعہ ہے اور گناہوں کے لئے کفارہ ہے، اور گناہوں سے روکنے اور حسد سے دُور کرنے والی چیز ہے۔‘‘(قیام اللیل)

حضرت ابو سعدی خدری ص سے روایت ہے کہ نبی کریم انے ارشاد فرمایاکہ: ’’ تین قسم کے آدمیوں سے حق تعالیٰ شانہ بہت خوش ہوتے ہیں، ایک اُس آدمی سے جو رات کو ( تہجد کی نماز کے لئے) کھڑا ہو، دوسرے اُس قوم سے جو نماز میں صف بندی کرے، اور تیسرے اُس قوم سے جو جہاد میں صف بنائے (تاکہ کفار سے مقابلہ کرے)۔‘‘(قیام اللیل)

حضرت ابو ہریرہ صسے روایت ہے کہ نبی اکرم انے ارشاد فرمایاکہ: ’’رمضان کے روزے کے بعد سب سے زیادہ فضیلت والا روزہ محرم کا ہے۔ اور فرض نماز کے بعد سب سے زیادہ فضیلت والی نماز رات (کے وقت تہجد )کی ہے۔‘‘( مسلم، مشکوٰۃ)

پرانے وقتوں میں نماز تہجد بڑی کثرت اور اہتمام کے ساتھ پڑھنے کا رواج تھا، گھر کے بڑے بوڑھے مختلف افراد مرد و عورتیں رات کے پچھلے پہر بستر چھوڑتے ، ٹھنڈے، گرم پانی سے وضو کرتے ، پھر مرد حضرات مسجد کی طرف چل دیتے ،اور خواتین گھر وں میں مخصوص جگہوں پر تہجد کی نماز ادا کرنے کا اہتمام کرتیں، اور یہ لوگ سپیدۂ سحر نمودار ہونے تک اسی طرح اپنے محبوب حقیقی کے ساتھ راز و نیاز میں ہمہ تن مصروف اور منہمک رہتے، لیکن آج بہت دُکھ اور افسوس کے ساتھ یہ کہنا پڑرہا ہے کہ جب سے نت نئی ایجادات ٹی وی، وی سی آر، ڈش اور انٹر نیٹ بالخصوص فیس بک وغیرہ متعارف ہوئی ہیں، تب سے ہم مسلمانوں سے ہمارا یہ قومی اور دینی ورثہ مکمل طرح سے چھوٹ گیا ہے، اور ہمارے آج کل کے نوجوان لڑکے، لڑکیاں رات گئے تک اِن نت نئی ایجادات سے محظوظ ہوتے رہتے ہیں اور پھر جب سحری اور تہجد کا مبارک وقت شروع ہورہا ہوتا ہے تب اِس نسل نو کے لہو لعب کا وقت ختم ہورہا ہوتا ہے اور اِن کی آنکھیں میٹھی نیند کے ہچکولے کھارہی ہوتی ہیں۔

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
26 Jan, 2018 Total Views: 406 Print Article Print
NEXT 
About the Author: Mufti Muhammad Waqas Rafi

Read More Articles by Mufti Muhammad Waqas Rafi: 124 Articles with 38029 views »

Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
Reviews & Comments
محترم مصنف سے انتہائی احترام کے ساتھ ایک گزارش ہے کہ اللہ ذوالجلال نے انسان کو صرف اور صرف اپنی عبادت کے لئے نہیں بھیجا. اس کے پاس ملائکہ اور جنات تعداد میں ہم آدم ذاد سے کہیں گنا زیادہ ہیں کہ وە روز ازل سے تا قیامت بھی سجدے میں رہیں تو کوئی اف تک نہ کہے گا. رہی بات ہم آدم ذاد کی تو اللہ نے ہمیں بنی نوع انسان کی یعنی ایک دوسرے کی مدد کے لئے پیدا کیا ہے. عبادت کرنا ہم پر فرض کیا گیا ہے مگر اس کے ساتھ ساتھ حقوق العباد کی فہرست بھی ہے جس کو پورا کرنا بھی اس آدم ذاد کی ذمہ داری ہے. لہذا دنیا میں انسان صرف اور صرف عبادت کے لئے پیدا نہیں کیا گیا ہے.
By: خلش, Lahore on Jan, 29 2018
Reply Reply
0 Like
قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ نے خود فرمایا ہے " وما خلقت الجن والانس الا لیعبدون" کہ میں نے انسان اور جنات کو صرف اپنی عبادت کے لئے پیدا کیا ہے (سورۂ طور) اور حقوق العباد ادا کرنا تهی اللہ کی عبادت ہے. کسی اہل علم سے اس کی تشفی فرمائی جاسکتی ہے
By: M.waqqasrafi, Wah cant on Jan, 31 2018
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB