بازار سے گزرا ہوں ،خریدار نہیں ہوں

(Waqar Ahmad Awan, )

موجودہ حالات اوپر سے ہوش اڑادینے والی مہنگائی ،بے چارہ پاکستانی کرے تو کیا کرے۔آئے روز کے نرخنامے ،قیمتوں کا آسمان کو چھونا ،پھل سبزیاں عام آدمی کی پہنچ سے باہر۔بے چارہ پاکستانی جائے توجائے کہاں؟بازار کا رخ کرے تو جیب اجازت نہ دے،ایسے میں کوئی اپنی معمولی خواہش کو بھلا کیسے پورا کرے؟اس پر شاعر نے کیاخوب کہاں ہے کہ
دنیا میں ہوں،دنیا کا طلب گارنہیں ہوں
بازارسے گزرا ہوں،خریدارنہیں ہوں

ملک میں عام آدمی جس مشکل سے زندگی بسر کررہاہے،اس بارے حکمران سو چ بھی نہیں سکتے ،انہیں کیا معلوم کہ آج سبزی کس بھاؤ فروخت ہورہی ہے؟بے چارہ غریب اپنے اور اپنے عیال کے لئے دو وقت کی روٹی لے جا پائے گا بھی یا گزشتہ کل کی طرح آج بھی اسے اور اس کے بچوں کو بھوکے پیٹ سونا ہوگا۔اس پر ستم ظریفی کہ بازاروں میں ملنے والے اشیائے خوردونوش پہلے سے ہی انسان کی جانی دشمن ہیں۔جس چیز کو اٹھا کردیکھ لیں ،ملاوٹ کی بو دور سے سونگھنے کوملے گی۔مگر مرتا کیا نہ کرتا بے چارہ پاکستانی خریدنے پر مجبور۔پاپی پیٹ کی بھوک مٹانے کے لئے اپنی قیمتی زندگی بھی داؤ پر لگانے کو تیار ہوچکا ہے آج کا پاکستانی۔ایک رپورٹ کے مطابق پاکستان میں ملنے والے ہر دس میں سے نو اشیاء خوردونوش ملاوٹ سے بھرپور ہیں البتہ وہ الگ بات ہے کہ ہماری قسموں کی بوریا ں مذکورہ اشیاء کو بیچنے میں ہماری پوری پوری مددگار ثابت ہوتی ہیں۔بہرکیف بات ہورہی تھی مہنگائی کی ،جیسے آج کل چالیس سے پچاس دنوں میں بڑھنے والی بوائلر مرغی کو بھی ’’سرخاب کے پَر‘‘لگ چکے ہیں۔ظالم آسمان سے اترنے کی زحمت ہی نہیں کرتی۔ایک طرف بازاروں میں پانی ملا ،بیمار اورلاغر جانوروں کے گوشت کی کھلے عام فروخت جاری ہے۔ تو دوسری جانب سو روپے کلو میں ملنے والی مرغی دوسو میں فروخت ہورہی ہے۔یہ الگ بات کہ ’’غالب کو خدا یادنہیں‘‘۔تاہم غور طلب بات یہ ہے کہ ایک تو بوائلر اور اوپر سے دوسو روپے کلو ۔۔غضب خداکا ۔لگتا ہے کہ ہم نے سیدھا دوزخ جانا ہے۔خیر مرغی خریدی تو خریدی ۔اب ذرا پھلوں اور سبزیوں کابھی حال ملاحظہ ہو۔اﷲ تعالیٰ کا کرم ہے کہ ملک خداداد میں پھلوں اور سبزیوں کی بہتات ہے ،مگر سوچنے والی بات کہ اس پر پھلوں اورسبزیوں کا ’’کال‘‘دیکھنے کوملتاہے۔کبھی ٹماٹر اتنا مہنگا کہ عام آدمی کی پہنچ سے باہر تو کبھی اتنا سستا کہ جانور بھی منہ نہ لگائے۔اسی طرح کبھی پھلوں کی قیمت پوچھنے پر آدمی شرم سے اپنا سر جھکا لے تو کبھی اتنا سستا جانوروں کے چارے کے کام آئے۔کچھ یہی حال دالوں کا بھی ہے حالانکہ پاکستان کا ہر تیسرا شخص بخوبی جانتا ہے کہ پاکستان میں ملنے والی دالیں کن چیزوں کا نتیجہ ہیں۔تاہم ان باتوں سے بھی ہرگز انکا رنہیں کیا جاسکتا کہ لوکل انتظامیہ بھی اس گھناؤنے کاروبار میں ملوث افراد کی برابر کی شریک ہے۔ ملک کے ہر شہر میں پرائس کنٹرول کمیٹیاں موجود ہیں جنہیں سرکار ماہانہ ہزاروں روپے تنخواہ صرف اس کام کے لئے دیتی ہے کہ روزمرہ اشیائے خوردونوش کو عا م آدمی کی پہنچ ہی میں رہنے دے۔ناکہ عام آدمی مہنگی اور چمچاتی دکانوں میں سجے کپڑوں اور جوتیوں کے جیسے سبزی ،پھل اور دیگر اشیائے خوردونوش کی دل میں حسرت لئے اپنے شب وروز بسر کرتا جائے۔کیونکہ اب تو یومیہ پانچ سو کمانے والا مضر صحت اشیائے خوردونوش کھانے پر مجبور ہے،دن بھر چلچلاتی دھوپ میں چار سے پانچ سو وہ بھی قسمت ساتھ دے ، وگرنہ بھوک وافلا س تو اس کا مقد ر بن چکی ہوتی ہے کو اگر سورج ڈھلے پیٹ بھرنے کے لئے مناسب خوراک میسر نہ ہو تو زندگی کا پہیہ چلے تو چلے کیسے؟بہرکیف حکومت کی اولین ذ مہ داری بنتی ہے کہ عام آدمی کو آئے روز کی خود ساختہ مہنگائی سے مستقل چھٹکار ادلائے تاکہ دن بھر کی تھکان شام کو اپنے عیال کے لئے چند کھانے کی چیزیں لے جاکر دور ہوسکے۔ اس لئے ضرورت اس امرکی ہے کہ بے چارے پاکستانی کو ذہنی سکون فراہم کیا جائے۔تاکہ عرصہ دراز سے بے چینی کاشکار پاکستانی اپنے آپ کو موت کے حوالے کرنے کی کوشش نہ کرسکے۔

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
13 Mar, 2018 Total Views: 146 Print Article Print
NEXT 
About the Author: Waqar Ahmad Awan

Read More Articles by Waqar Ahmad Awan: 48 Articles with 10783 views »

Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB