گنز اینڈ روزز (قسط ٢)

(Hukhan, karachi)

اس کو پڑوسی ملک سے مدد مل رہی ہے،،،خود کو پکا جنتی ،،راسق العقیدہ
مسلمان سمجھتا ہے،،
ہم سب اس کی نظر میں یہودیوں کے اعلا ء کار ہیں،،،ہمارا اسلام سے کوئی
تعلق نہیں ہے،،،

وہ پاک افغان بارڈر سے آتا جاتا ہے،،،پشتو،،،فارسی دونوں زبانوں پر عبور حاصل
ہے،،،
وزیرستان کے نام نہد خان نے جو بہت بڑا اسمگلر ہے،،اس کو دین کی خدمت
کے لیے چن رکھا ہے،،،
ڈی ایس پی رانا سانس لینے کے لیے رکا،،،آفندی نے کافی کا مگ میز پر
رکھ دیا،،،

کل بارہ اپنے جیسے لوگوں سے رابطے میں ہے،،یہ آپس میں سیٹلائٹ فون
سے بات چیت کرتے ہیں،،،ہر بار،،،نام اور زبان بدل کر رابطہ کرتے ہیں،،،
اس نے اب تک انیس قتل کئے ہیں،،،اور سو کے قریب لوگوں کے زخمی اور
مرنے کا عینی شاہد ہے،،،

اب کے آفندی کے حلق سے شیر کے جیسے‘‘ہنہ‘‘ کی آواز آئی،،،اس کے ہاتھ
نہیں ہونے چاہیے،،،
ڈی ایس پی رانا نے حیرت سے آفندی کو دیکھا،،،رانا کی آنکھوں میں سوال
تھا،،،آفندی کی آواز اس کی سماعت سے ٹکرائی،،،بیسواں قتل نہ کر سکے،،،
آنکھیں بےفضول ہیں اس کے پاس،،،اب اس کو اس قابل نہیں رہنے دینا،،کہ
وہ عینی شاہد بن سکے،،،

آفندی مسکرا کے بولا،،،ویسے رانا،،،یو آر گیٹ انگ بیٹر اینڈ بیٹر ایوری ڈے،،
رانا کی خوشی کی انتہا عروج پر تھی،،،کیونکہ آفندی صدیوں میں مسکراتا
تھا،،،

کیسے اُگلا وہ سب؟؟،،،،!! آفندی کے سوال پر رانا پھول سا گیا،،،مگر آفندی
کے اگلے جملے نے اس کی ساری غیر ضروری ہوا نکال دی،،،
رانا اگر تم خود کی آرتی اتارنا بند کردو،،،تو ہم آگے بڑھ پائیں گے،،،

رانا منہ بنا کر بولا،،،بس اس کی سوال کے پیچھے،،،نیچے سے باندھ دیا،،،
کالا بڑا والا چوہا،،،بلیک کلر پینٹ سے ایسا گندہ کردیا کہ لگا ابھی ہی
ہنٹر سے پکڑ کر لایا ہوا ہو،،،
اسے میرا ایسا کرنا برا نہ لگے،،،اس سے بولا،،،یہ خاندانی چوہا ہے،،،چوہوں
کی رائل فیملی سے تعلق ہے،،،بس رائل فیملی نے اس کی گٹر والوں چوہوں
سے میل ملاپ کی وجہ سے اس کو گٹر بند کردیا،،،یعنی عاق کردیا،،،بس

آفندی نے گھور کے دیکھا،،،رانا سٹپٹا سا گیا،،،میں ایسا صرف سوچا،،،
کورال سے کہا نہیں تھا،،،بس اس کی شلوار میں ڈال دیا،،،پتا نہیں چوہا اندر
کیا گل کھلا رہا تھا،،،مگر کورال بندھا ہونے کے باوجود کرسی پر ہی ڈانس
کرنے لگا،،،میں بہت بولا کہ شریعت میں ڈانس جائز نہیں،،،

آفندی کی نظروں کو دیکھ کر رانا خاموش ہوگیا،،،آفندی بولا،،،ناممکن،،،
رانا نے حیرت سے سامنے بیٹھے ہوئے اڑتیس سالہ(٣٨) لوہے کے انسان
کو دیکھا،،،،،،(جاری)
 

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
22 Dec, 2017 Total Views: 1106 Print Article Print
NEXT 
About the Author: Hukhan

Read More Articles by Hukhan: 932 Articles with 431174 views »

Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
Reviews & Comments
Boht acha novel likh rahe hain brother agar sath sath Islamic Addition bhi hojaye toh aur ziada interesting hojayega jese peer kamil aur jannat k pattey .JazakAllahu Khair
By: Naila, Karachi on Dec, 25 2017
Reply Reply
0 Like
thx sister,,,,it will be in my book,,,,when its published
By: hukhan, karachi on Dec, 26 2017
1 Like
hahahaha,,,,,very nice
By: Mini, mandi bhauddin on Dec, 24 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Dec, 24 2017
0 Like
rana is very interesting chracter
By: khalid, karachi on Dec, 23 2017
Reply Reply
0 Like
thx bro
By: hukhan, karachi on Dec, 24 2017
0 Like
shariyath may dance kerna jaiz nahi hahahahahaha kamal ka dialogue tha janab ..... mazay dar dialogues thay .... jeetay rehyai
By: farah ejaz, Karachi on Dec, 22 2017
Reply Reply
0 Like
thx sister.....need your good wishes
By: hukhan, karachi on Dec, 24 2017
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB